قومی

  • قومی
  • Jul 19, 2019

قبائلی اضلاع انتخاب

پچیسویں آئینی ترمیم کے نتیجے میں خیبر پختونخوا میں ضم ہونے والے سابقہ قبائلی اضلاع کے عوام ملک کی تاریخ میں پہلی بار صوبائی اسمبلی کیلئے اپنے نمائندے چنیں گے ۔
سابقہ فاٹا میں خیبر پختونخوا اسمبلی کی سولہ جنرل نشستوں پر انتخابات کے لئے الیکشن کمیشن نے تمام تیاریاں مکمل کرلی ہیں ۔پولنگ میٹریل پریزائیڈنگ افسروں کے حوالے کر دیا گیا ہے۔ سابقہ فاٹا میں باجوڑ، مہمند،خیبر،کرم،اورکزئی، شمالی وزیرستان ،جنوبی وزیرستان کے اضلاع اورچھ ایف آرزشامل ہیں۔سات قبائلی اضلاع کے پندرہ اور سابق فرنٹئیر ریجنز پر مشتمل خیبر پختونخوا اسمبلی کے ایک حلقے کے لئے امیدواروں کا انتخاب عمل میں لایا جائے گا۔ سولہ جنرل نشستوں پر مجموعی طور پر 285امیدوار میدان میں رہ گئے ہیں جن میں ضلع خیبر اور کرم سے ایک ایک خاتون بھی شامل ہے ۔ الیکشن کے لئے قبائلی اضلاع کے عوام میں کافی جوش و خروش پایا جارہاہے ۔ الیکشن میں مجموعی طور پر اٹھائیس لاکھ سے زائد ووٹرز حق رائے دہی استعمال کرسکیں گے جن میں سولہ لاکھ اکہتر ہزار سے زائد مرد اور گیارہ لاکھ تیس ہزار سے زائد خواتین ووٹر شامل ہیں ۔ پولنگ کے لئے ایک ہزار آٹھ سو ستانوے پولنگ سٹیشن قائم کئے گئے ہیں جن میں 554 پولنگ سٹیشنوں کو انتہائی حساس قرار دیا گیا ہے ۔ پولنگ کے روز عملے اور ووٹروں کی حفاظت کے لئے سیکیورٹی کی جامع منصوبہ بندی کی گئی ہے جس کے تحت پاک فوج کے دستوں کو تعینات کیا گیا ہے۔انتخابات کے دن شکایات کے ازالے کے لئے صوبائی الیکشن کمیشن کے دفتر میں شکایات سیل بھی قائم کیا گیا ہے جبکہ خواتین کے مسائل کے حل کے لئے صوبائی الیکشن کمیشن کے دفتر میں دائریکٹر جنڈر افیئرز کی سربراہی میں خصوصی ڈیسک بھی قائم کیا گیا ہے۔