ٹاپ سٹوری

  • ٹاپ سٹوری
  • Oct 10, 2019

وزیراعظم کی صدارت میں حکومتی معاشی ٹیم کا اجلاس

وزیر اعظم عمران خان نے کہا ہے کہ ہماری اولین ترجیح معاشی نظام کو مستحکم بنیادوں پر چلانا ہے جس کے نتیجے میں روزگار کے مواقع پیدا ہو نگے، سرمایہ کاروں کا اعتماد بڑھے گا اور مقامی صنعتوں کو فروغ ملے گا۔
اسلام آباد میں حکومت کی معاشی ٹیم کے اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے وزیر اعظم نے ہدایت کی کہ چھوٹے اور درمیانے درجے کی صنعتوں کے فروغ کے لیے ایک ہفتے میں مکمل ایکشن پلان پیش کیا جائے۔اس لائحہ عمل میں مختلف اہداف کے حصول کے لیے مخصوص میعاد کا تعین شامل ہو۔
اجلاس میں چھوٹی اور درمیانی صنعتوں کے فروغ، بیمار صنعتوں کی بحالی اور تعمیرات سیکٹر کو مراعات دینے کے حوالے سے تفصیلی تبادلہ خیال ہوا۔ بریفنگ میں بتایا گیاکہ 687 ایسے یونٹس ہیں جن کو فوری طور پر بحال کرنے کے لئےاقدامات کیے جاسکتے ہیں۔وزیراعظم عمران خان نے ہدایت کی کہ 60دن میں مفصل منصوبہ بندی کے تحت ان یونٹس کو بحال کرنے کے لیے ضروری اقدامات کومکمل کیا جائے۔انہوں نے کہا کہ نجی شعبے کو بھی ایس ایم ایز کے فروغ کے عمل میں شامل کیا جائے۔وزیر اعظم نے کہا کہ کاروبار میں آسانیاں پیدا کی جائیں تاکہ سرمایہ کار کسی دقت کے بغیر سرمایہ کاری کر سکیں۔ انہوں نے کہا کہ مقامی سطح پر چھوٹے صنعتی یونٹس کو ترجیح دی جائے۔
اجلاس کو بتایا گیا کہ تعمیراتی شعبے سے منسلک صنعتوں کو جلد ٹیکس مراعات دے دی جائیں گی۔ وزیر اعظم نے مشیر خزانہ کو ہدایت کی کہ سٹیل اور سیمنٹ صنعتوں کے سیلز ٹیکس کے حوالے سے ایف بی آر، نیا پاکستان ہاوسنگ اتھارٹی اور صوبائی حکومتوں سے مل کر لائحہ عمل ترتیب دیا جائےاورآئندہ ہفتے اس بارے میں رپورٹ پیش کی جائے۔ وزیر اعظم عمران خان نے کہا کہ بین الوزارتی ہم آہنگی بڑھانے کے لیے معاشی ٹیم کے ساتھ تواتر کے ساتھ اجلاس منعقد کیے جائیں گے ۔