بین الاقوامی

  • بین الاقوامی
  • Sep 19, 2019

ایودھیہ کی تاریخی بابری مسجد کی شہادت سے متعلق کیس کی سماعت

بھارتی سپریم کورٹ نے ایودھیہ کی تاریخی بابری مسجد کی شہادت سے متعلق کیس کی سماعت اٹھارہ اکتوبر تک مکمل کرنے کی ہدایت کی ہے۔
بھارتی سپریم کورٹ کے مطابق اگر فریقین چاہیں تو تنازعے کو عدالت سے باہرثالثی کے ذریعے حل کرسکتے ہیں اور ثالثی پینل عدالتی فیصلہ محفوظ ہونے کے بعد بھی اپنی رپورٹ پیش کرسکتا ہے۔تاہم فریقین اس تجویز سے متفق نظر نہیں آرہے۔بھارتی سپریم کورٹ نے بابری مسجد کی زمین کے تنازعے پر ثالثی پینل کی ناکامی کے بعدچھ اگست سے روزانہ کی بنیاد پر سماعت کرنے کا فیصلہ کیا تھا۔بابری مسجد کی ملکیت کے لیےتین فریقوں سنی وقف بورڈ، نرموہی اکھاڑا اور رام للا کے درمیان قانونی جنگ کئی برسوں سے جاری ہے۔تاریخی بابری مسجد کوچھ دسمبرانیس سو بانوے میں انتہا پسند ہندوؤں نے شہید کردیا تھا۔ بھارتیہ جنتا پارٹی نے لیڈرایل کے ایڈوانی کی قیادت میں سخت گیر تنظیموں وشوا ہندو پریشد، بجرنگ دل اور شیو سینا نے بابری مسجد کی جگہ رام مندر کی تعمیر کے لیے تحریک چلائی تھی۔بابری مسجد کو شہید کئے جانے کے بعد نئی دلی اور ممبئی سمیت بھارت میں دو ہزار مسلمانوں کو ہندو مسلم فسادات کے دوران شہید کیاگیا۔