قومی

  • قومی
  • Jul 15, 2019

وزیراعظم کی صدارت میں انضمام شدہ قبائلی علاقوں سے متعلق جائزہ اجلاس

وزیراعظم عمران خان نے کہا ہےکہ ہر طرح کے کاروبار کا باقاعدہ اندراج اور ٹیکس نیٹ کی توسیع اقتصادی ترقی کے لئے ازحد ضروری ہے تاہم انضمام شدہ علاقوں میں ٹیکس کی شرح کے تعین میں علاقے کے عوام کی مشکلات اور زمینی حقائق کو مدنظر رکھا جائے گا۔
اسلام آباد میں انضمام شدہ قبائلی علاقوں میں ترقیاتی منصوبوں پر پیش رفت سے متعلق جائزہ اجلاس کی صدارت کرتے ہوئےوزیر اعظم نے کہا کہ قومی آمدن کا تقریباً نصف حصہ قرضوں اور سود کی ادائیگی میں خرچ ہو جاتا ہے۔ معاشی استحکام کے لئے ضروری ہے کہ معاشی سرگرمیوں کو باقاعدہ دستاویزی شکل دی جائے اورٹیکس کے دائرے کو بڑھا یا جائے۔ وزیرِ اعظم عمران خان نے کہا کہ انضمام شدہ علاقوں کے عوام نے بے پناہ قربانیاں دی ہیں ۔ ان علاقوں کی تعمیر و ترقی اور نوجوانوں کو روزگار کی فراہمی اولین ترجیح ہے۔
قبائلی اضلاع سے تعلق رکھنے والے سینیٹرز نے کہا کہ انضمام شدہ علاقوں کی تعمیر اور ترقی کے لئے جتنے فنڈز فراہم کیے ہیں اس پر عوام حکومت کے مشکور ہیں ۔انہوں نےوزیر اعظم سے ٹیکسوں کے حوالے سے علاقے کے عوام کی مشکلات کو مد نظر رکھنے کی درخواست کی۔