قومی

  • قومی
  • Apr 14, 2019

وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کی ملتان میں میڈیا سے گفتگو

وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ موجودہ حکومت کو معاشی مسائل ورثے میں ملے ۔ حکومتی اقدامات سے معیشت میں ٹھہراؤ آچکا ہے۔
ملتان میں میڈیا سے گفتگوکرتے ہوئے وزیر خارجہ نے کہا کہ گزشتہ ادوار میں لئے گئے قرضوں کی ذمہ دار تحریک انصاف کی حکومت نہیں ۔ انہوں نے کہا کہ ہم جب حکومت میں آئے تو صرف دو ہفتوں کے لئے زرمبادلہ کے ذخائر موجود تھے ۔ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ حکومت بہتری کے لئے کوششیں کر رہی ہے لیکن حالات راتوں رات بہتر نہیں ہوسکتے ، بتدریج حالات بہتر ہوں گے اور پاکستان میں بیرونی سرمایہ کار بھی آئیں گے جس سے روزگار کے مواقع پیدا ہوں گے ۔ ایک سوال پر وزیر خارجہ نے کہا کہ حکومتیں گرانا مسائل کا حل ہوتا تو کوئی حکومت چل ہی نہ سکتی ۔عوام نے تحریک انصاف کو منتخب کیا ہے ،پانچ سال بعد اپنی کارکردگی عوام کے سامنے پیش کریں گے پھر عوام جو فیصلہ کریں گے اسے قبول کیا جائے گا۔ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ افغان امن عمل اور بھارتی انتخابات سے متعلق وزیراعظم کے بیانات کو سیاق وسباق سے ہٹ کر پیش کیا گیا۔پاکستان افغان قیادت میں افغان امن عمل کی حمایت کرتا ہے اور اس سلسلے میں ہر ممکن معاونت کرر ہے ہیں۔وزیرخارجہ نے ایک بار پھر اس بات کا اعادہ کیا کہ بھارتی انتخابات مکمل ہونے تک پاکستان کو چوکنا رہنا ہوگا۔ ایک اور سوال پرشاہ محمود قریشی نے کہا کہ نیب حکومت کے ماتحت نہیں بلکہ ایک خودمختار ادارہ ہے ۔ حکومت کی توقع ہے کہ نیب کرپشن کے تدارک کے لئے مدد کرے ۔
کوئٹہ میں دہشتگردی کے واقعے بارے میں وزیر خارجہ نے کہا کہ بھارت کی طرح غیر ذمہ دارانہ بیان بازی کی بجائے تحقیق کی جارہی ہے کہ پر امن ہزارہ کمیونٹی پر حملہ فرقہ واریت کی واردات تھی یا اس کے محرکات کچھ اور تھے ۔ وزیر خارجہ نے بتایاکہ وزیراعظم چین سے پہلے ایران کا دورہ کریں گے اور دونوں ملکوں سے باہمی مفادات پر مبنی مفید بات چیت ہوگی ۔
اس سے قبل وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے ملتان کے علاقے شاہ رکن عالم میں واٹر فلٹریشن پلانٹ کا افتتاح کیا ۔جس کا مقصد علاقے کے لوگوں کو پینے کے صاف پانی کی فراہمی کو یقینی بنانا ہے۔