قومی

  • قومی
  • Jun 21, 2018

شریف خاندان کے خلاف ایون فیلڈ ریفرنس کی سماعت

احتساب عدالت میں شریف خاندان کے خلاف ایون فیلڈ ریفرنس کی سماعت۔۔۔وکیل صفائی خواجہ محمدحارث کےحتمی دلائل تیسرےروزبھی جاری رہے۔وکیل صفائی نے کہا کہ سپریم کورٹ میں دیا جانے والا طارق شفیع کا بیان حلفی سچ ہے یا جھوٹ میں نہیں جانتا،لیکن وہ اس کیس میں گواہ نہیں ۔ سچ اور جھوٹ کا فیصلہ عدالت نے کرنا ہے۔خواجہ حارث نے کہا کہ جےآئی ٹی کی رپورٹ ایک تفتیشی رپورٹ ہے،تفتیش میں جمع کئے گئے مواد کی روشنی میں نتائج عدالت میں اخذ ہوتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ واجد ضیا نے رپورٹ میں جن گواہان کا ذکر کیا انہیں اس عدالت میں پیش نہیں کیا گیا ۔قانون شہادت کے مطابق گواہوں کو پیش کئے بغیر واجد ضیاء ان کی جگہ خود گواہی نہیں دے سکتے ۔وکیل صفائی نے کہا کہ جے آئی ٹی کی قطری شہزادے سے خط وکتابت میں اس نے تین بار اس بات کی تصدیق کی کہ جو بات سپریم کورٹ میں کہی گئی وہ درست ہے ۔اگر قطری شہزادے کا خط نواز شریف کے خلاف استعمال کرنا تھا تو اسے بطور گواہ عدالت میں پیش کرنا چاہیئے تھا ۔کیس کی سماعت کل پھر ہو گی۔